Melon Kharbooza ke Fayde

Melon Kharbooza ke Fayde

خربوزہ ایک پھل جس کے فائدے بے شمار

موسم گرما کی آمد کے ساتھ ہی قدرت کے بہت سے شاہکار پھلوں کی آمد بھی شروع ہوجاتی ہے۔ ان پھلوں میں سے ایک خربوزہ بھی ہے۔ خربوزہ ذائقہ دار ہونے کے علاوہ فرحت بخش بھی ہے۔خربوزہ انسانی صحت اور نشو و نما میں بڑی اہمیت کا حامل پھل ہے۔خربوزہ نہ صرف اپنی شکل و صورت سے بھلا لگتا ہے بلکہ اس کو بچے بوڑھے اور عورت اور مرد سب ہی بڑے شوق سے کھاتے ہیں۔

خربوزہ میں موجود وٹامنز

خربوزے کے اندر قدرت نے بہت سے وٹامنز اور منرل رکھے ہیں، خربوزہ میں90%پانی ہوتا ہے۔ اس میں کاربوہائیڈریٹس، آئرن، فاسفورس، پوٹاشیم، کیلشیم، سوڈیم اور زنک پایا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ اس میں وٹامنز بھی موجود ہوتے ہیں جن میں وٹامن اے، بی، سی، ای اور کے ہیں۔ 100 گرام خربوزے میں 21 حرارے، ایک گرام پروٹین ، پانچ گرام کاربوہائیڈریٹ، ایک گرام نشاستہ ہوتا ہے۔ خربوزے میں پانی، فاسفورس، کیلشیم ، پوٹاشیم، کیرے ٹن، تانبا، گلوکوز اور وٹامن اے، بی اور ڈی پائے جاتے ہیں۔ وٹامن ڈی کی موجودگی سے خربوہ جسم کو نا صرف مضبوط بناتا ہے، بلکہ دھوپ کی تپش برداشت کرنے کے قابل بھی بناتا ہے۔

خربوزہ کھانے کے فائدے

خربوزہ پیشاب کی تکالیف ،یرقان اور قبض میں کھانا مفید ہے۔خربوزہ کھانے سے پرانی سے پرانی قبض میں بھی افاقہ ہا جاتا ہے۔کیونکہ خربوزے میں 90%پانی ہوتا ہے۔خربوزہ پٹھوں اور رگوں کے لئے مفید پایا گیا ہے۔خربوزہ نہ صرف آپ کے ہاضمے کو درست رکھتا ہے ۔ خربوزہ ،گردے کے درد اور پتھری میں بھی مفید ہے۔۔خربوزہ جسم کی خشکی کو دور کرتا ہے۔ اس کے علاوہ بھی خربوزے کے بہت سے فائدے ہیں۔

خربوزے کو مختلف امراض کے علاج میں بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ خربوزے کا مغز، گودا، چھلکا مختلف دواؤں میں استعمال ہوتے ہیں۔ خربوزہ میں معدے ، آنتوں میں رکے ہوئے زہریلے فضلے خارج کرتا ہے۔ گردوں کی صحت کے لئے مفید ثابت ہوا ہے اور مثانہ اور گردے کی پتھری کا موثر علاج بھی ہے۔ خربوزے میں گوشت بنانے والے روغنی اجزاء بھی شامل ہوتے ہیں۔ ۔ اس کے کھانے سے پیشاب کھل کر آتا ہے اور جسم سے فاسد مادے خارج ہو جاتے ہیں۔ یرقان، پتھری، بندش پیشاب جیسے امراض میں مفید ہے۔

خربوزہ سے علاج

گردوں کے امراض کے لیے

گردے کی شدید تکلیف سے نجات کے لیے خربوزے کے دو گرام خشک چھلکے، ایک پاؤعرق گلاب میں جوش دے کر اسے چھان لیجیے اور اس میں تین گرام کالا نمک ملا کر مریض کو پلائیں۔

کمزوری دور کرنے کے لیے

دل کی کمزوری ، معدے اور جگر کی کمزوری میں خربوزے کے بیج ،منقی، مغز، تخم خیاران، تخم کدو ہم وزن لے کر پیس لیں اور چھان کر ہلکی سی شکر ملا کر علی الصبح پی لیں ۔ اس سے آپ کو دل کی کمزوری، معدے اور جگر کی کمزوری میں خاطر خواہ فرق محسوس ہو گا۔

جلد کی خوبصورتی کے لیے

چہرے کے داغ دھبے دور کرنے کے لیے خربوزے کے خشک چھلکے ، مونگ کی دال (یا بیسن)میں ہم وزن پیس کر دہی میں ملا کر اس کا پتلا لیب بنا کر داغوں پر لگانے سے داغ بھی غائب ہوں گے اور چہرے پر نکھار بھی آئے گا۔خربوزہ کھانے سے جلد کی خشکی دور اور رنگت نکھر جاتی ہے۔

خربوزہ کھانے میں احتیاط

خربوزہ ہمیشہ کھانا کھانے کے بعد استعمال کرنا چاہیے۔ اور کوشش کرنی چاہیے کہ خالی پیٹ اس کا استعمال نہ کیا جائے۔

کاٹنے کے بعد خربوزے کو جتنی جلدی ممکن ہوکھا لینا چاہیے ورنہ فوڈپوائزننگ کاخدشہ ہوسکتا ہے۔ اس کے علاوہ خربوزہ کھانے کے بعد فوراً پانی نہیں پینا چاہیے۔ نیزخربوزہ خریدنے کے بعد اسےتین سے چاردن کے اندر اندراستعمال کر لینا چاہیے۔